Takreem e Shuhdah Foundation(Reg.)

A step towards Unity and Self reliance among Hazara Shia Asna Ashari (Quetta)

                                                                September News

- 23-09-2011: Another three Hazara momineen have been martyred on a van going towards Mach:

Three Hazara momineens travelling along with the other passengers on the van going towards Mach were martyred. The van was stopped by the unknown terrorists and the people belonging from Hazara tribe was taken out of the van and martyred them on the spot.

This was the second incident in four days when the terrorists have stopped the veichel, taken out the hazara momineen and martyred them while leaving the other passangers untouched.

-20-09-2011: A pilgrim bus going to Iran was attacked leaving at least 29 Martyred and more than 6 Injured: 

Nasabi-Wahabi terrorists of Taliban and Laskhar-e-Jahngvi (LeJ) opened fire on a bus in the Mastung area of Balochistan, carrying passengers to Iran on Tuesday, martyred around 26 Shia Hazras pilgrims, police said.

“The bus was travelling to the town of Taftan (Iran) when it was attacked,” a police official in Quetta, the provincial capital, told Reuters.The bus was carrying around 50 Shia pilgrims in total, which were mostly from Hazara tribe, was attacked by eight to ten fully armed terrorists on two vehicle.

There are fears the death toll yet rise further after the attack in Mastung, a district 50 kilometres (30 miles) south of Quetta, the capital of the Balochistan province, the local deputy commissioner Saeed Imrani told AFP.
 
“Nasabi-Wahabi Armed men stopped the bus by blocking it from the front and left side of the bus, then opened fire on their bus,” Imrani told AFP identifying all the dead as Shia pilgrims. “The death toll has risen to 26. At least six people were wounded, four of them are in a critical condtion,” he added.
 
Ambulances have reached the site. Locals and passengers are taking the wounded pilgrims to a nearby hospital in Quetta. The attack occurred near the western bypass near Quetta.The passenger coach, which was on its way from Quetta to Taftan, was carrying 50 passengers when it was attacked near the Akhtarabad area.
 
The assailants escaped after the attack. Police and other law-enforcement agencies took the bodies and the injured to the Bolan Medical College Hospital, sources at the hospital said.

Later there was another attack near the same area when the private car was carrying the momineens injured in the attack leaving another three Martyred.

Meanwhile, Majlis-e-Wehdat-ul-Muslameen, Jaffaria Alliance Pakistan and Shia Conference Balochistan have announced three days of mourning against the terrorist attack and demanded of the termination of the biased Balochistan Government.
 
Attacks on pilgrims are common in Quetta, where dozens of people have fallen prey to such attacks in recent times.On July 29 this year, at least seven pilgrims were killed in a similar attack on Saryab Road in Quetta.

 

 

 

 

- 24-09-2011: Shahadat e Imam Jaffar e Sadiq a.s. and Rooz e Shuhadah e Quetta in Melbourne

Takreem e Shuhdah Foundation with the help of Hussaini Islamic Center in Melbourne has organized the event of Shahdat e Imam Jaffar Sadiq a.s. and Rooz e Shuhadah e Quetta in Melbourne for the first time. The gathering has been organized to commemorate the Martyrdom of Imam Jaffar e Sadiq a.s. and also to pay tributes to Martyrs of Quetta.

The even will include the speaker Maulana Ghulam Ali Haidari and Maulana Syed Ahmed Kazmi that will be addressing to momineen regarding the Martyrdom of Imam a.s. and also about the martyrs of Quetta and the responsibilites they leave on their people. The event will also have Fatiha Khawani for Shuhdah, the videos for the Martyrs, Marsiya, Nauha and Mattam. All the momineens in Melbourne are requested to attend the gathering and make as much contributions as they can.

 

 

- 04-09-2011: Fatiha e Shuhdah e Eid ul Fitar in Australia:

In Melbourne: 

A fatiha Khwaani for the Shuhdah e Eidul Fitar has been organized by Takreem e Shuhdah Foundation in Melbourne. The address is 2/60 Hammond Road Dandenong 3175. All the brothers are requested to attend the Fatiha to pay the condolence and support for the all the Shuhdah and the injured. In Fatiha, the program for "Yum e Shuhdah e Quetta" which is going to be held in coming weeks will be discussed as well. All the momineen are reuqested to attend the gathering in remembrance of the all the Shuhdah and particularly Shuhdah e Eid ul Fitar.

In Brisbane:

Fatiha for Shuhdah e Eid ul Fitar will be held from 3pm till Namaaz e Maghrabain at 1408 Beenleigh Road, Kuraby at Kuraby Hussainia on Sunda, 4th of September 2011. Please encourage Ladies, Gents and Youth of the community to attend. Momineen and moinaat are requested to remember the Shuhadah in their prayers with Surah e Fatiha.

 

 

 

02-09-2011: Sayom e Shuhdah e Eid ul Fitar in Quetta:

                                          

احتجاجات کا سلسلہ جاری رہنا چاہیئے : ابراہیم ہزارہ ہمیں اپنی بقا اور دہشت گردی روکنے کیلئے بہت کچھ کرنا ہوگا : علامہ سید ہاشم موسوی میں قوم کیلئے ہر قسم کی قربانی دینے کیلئے تیار ہوں : سید ناصر علی شاہ کوئٹہ کے شہدا کو سلام ہو جنکو سید حسن نصراللہ نے پہلے درجے کے شہدا قرار دیا : علامہ امتیاز بہشتی حق و باطل کی جنگ حضرت آدم کے دور سے جاری ہے: سردار سعادت علی خان آج عید کے تیسرے روز شہدائے نماز عید کارسم سوئم امام بارگاہ نچاری میں منایا گیا جہاں‌ پر شہداء کے درجات کی بلندی کیلئے خصوصی دعائیں اور قرآن خوانی ہوئی .

دن بھر زندگی کے مختلف شعبوں‌سے تعلق رکھنے والے افراد قرآن خوانی اور فاتحہ خوانی میں شرکت کرتے رہے. قرآن خوانی اور فاتحہ خوانی کے اختتام پر ایک عظیم الشان احتجاجی جلسہ ہوا جس میں‌ قوم و ملت کے علماء کرام اور اکابرین نے خطاب کی. جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے محمد ابراہیم ہزارہ نے کہا کہ ان دہشت گردیوں‌ کا سلسلہ بغیر احتجاج کے ختم نہیں ہوگا ہمیں‌ مسلسل احتجاج کرنا چاہیئے اور اُس وقت تک یہ احتجاج جاری رہے جب تک یہ سلسلہ بند نہیں‌ ہوتا.

امام جمعہ کوئٹہ علامہ سید ہاشم موسوی نے کہا کہ ہمیں دہشت گردی روکنے کیلئے بہت کچھ کرنا ہوگا اورہرکام قوم کی اتحاد کے بغیر ممکن نہیں. تقریر سے خطاب کرتے ہوئے ایم این اے سید ناصر علی شاہ نے کہا کہ میں‌ نے ہر پلیٹ فارم پر صوبائی حکومت کی نااہلی اور انتظامیہ کے ناکامی کی آواز بلند کی، صوبائی حکومت خود ان کارستانیوں میں ملوث ہے اور صوبائی اور وفاقی حکومت دونوں‌ ناکام ہوچکی ہیں. میں نے پارلیمنٹ میں‌ وزیراعظم اور ان کی حکومت کو نااہل قرار دیتے ہوئے مستعفی ہونے کا مطالبہ کیا.انہوں نے قوم سے کہا کہ میں‌ دہشتگردی سے نمٹنے کیلئے قوم کا ہر ممکنہ تعاون کرنے کوتیار ہوں

جلسہ کے‌آخر میں خطاب کرتے ہوئے سردار سعادت علی خان نے کہا کہ حق وباطل کی جنگ آج سے نہیں بلکہ حضرت آدم علیہ السلام کے دور سے چلتا آرہا ہے اور جب تک دنیا باقی ہے یہ جنگ جاری رہے گی. اور یہ ہمارےلئے فخر کی بات ہے کہ کربلائے کوئٹہ میں حق و صداقت کا علم ہم غیور ہزارہ شیعہ قوم کے ہاتھوں میں ہے اور ہمیں‌ افتخار ہے مولاعلی علیہ السلام کے نام پر اور اُن شہدا پر جو محبتِ محمد و آلِ محمد پر شہید ہوئے. انہوں نے مزید کہا کہ جو سیاسی پارٹیاں اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ یہ سلسلہ سیاسی انداز میں حل ہوسکتا ہے تو میں‌ تو سمجھتا ہوں کہ یہ اُن کی بھول ہے کیونکہ جو جنت کے شوق سے دیوانہ وار ہمیں قتل کرتے ہیں اُن کے ساتھ کیا مصالحت ہوسکتا ہے ؟ انہوں‌ نے آخر میں کہاں کہ ان سب سے نمٹنے کیلئے ہمیں‌ خود تیار ہونا چاہئیے .

جلسہ کے آخر میں‌ علامہ ابن الحسن نے مندرجہ زیل قرارداد پیش کئے. 1. ٹارگٹ کلنگ کا خاتمہ کیا جائے. 2. گورنمنٹ کے عہدیدار فرائض سنھبالے یا استعفیٰ دے دیں. 3. تمام اقوام کو اتحاد بین المسلمین کی دعوت دیتے ہیں. 4. اِن حملوں کا زمہ دار صوبائی حکومت ہے.

احتجاجی جلسے کے بعد شرکاء جلوس کی شکل میں ہزارہ قبرستان گئے جلوس کے شرکاء نے حسینیت کے حق میں انتظامیہ ، صوبائی حکومت بالخصوص وزیراعلیٰ، برطانیہ، امریکہ و اسرائیل اور اُنکے ایجنٹوں ، لشکر جنگھوی اور وفاقی حکومت کے خلاف نعرے لگائے. جلوس علمدار روڈ سے ہوتا ہوا بہشت زینب ہزارہ قبرستان پہنچا جہاں شرکا سے خطاب کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی عہدیدا علامہ امتیاز بہشتی نے کہا کہ آج بھی نمازِ جمعہ کے بعد پوررے پاکستان میں‌ احتجاج ہوا . اور ہم کوئٹہ کے غیور عوام کو یہ یقین دلاتے ہیں کہ اُن کے لئے ہم پورے ملک اور پاکستان کے کونے کونے میں‌ صدائے احتجاج بلند کرئے گے اور یہ سلسلہ شروع ہوا ہے. انہوں نے مزید کہا کہ یوں تو ہم پورے ملک میں ملت جعفریہ شہید رہے ہیں مگر یہ سعادت صرف کوئٹہ کے شہدا کو حاصل ہے کہ جنہیں سید حسن نصراللہ نے سلام پیش کرتے ہوئے درجہ اول کے شہداء قرار دیئے اور جن کو رہبر